یورپی پارلیمنٹ برسلز میں کشمیر ای یو ویک کی تقریبات آئندہ ہفتے شروع ہوں گی

Kashmir EU Week

Kashmir EU Week

برسلز (پ۔ر) یورپی پارلیمنٹ برسلزمیں کشمیر کونسل یورپ (ای یو) کے زیراہتمام ’’کشمیر ای یو ۔ویک‘‘ کے حوالے سے تقریبات پانچ نومبر بروز پیر شروع ہوکر ۹ نومبر تک جاری رہیں گی۔ وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر خان کشمیرای یو ویک کے مہمان خصوصی ہوں گے۔

کشمیرای یو ۔ویک یا ’’یورپ میں ہفتہ کشمیر‘‘ کی تقریبات جن میں بین الاقوامی کانفرنس، متعدد سیمینارز، مباحثے، اور کشمیرپردستاویزی فلمیں اور عکاسی اور دست کاری کی اشیاء کی نمائش شامل ہوتی ہیں، ہرسال یورپی پارلیمنٹ میں منعقد کیا جاتا ہے۔

ہفتہ کشمیرکے دوران مقبوضہ کشمیرکی تازہ ترین صورتحال پر رپورٹس بھی پیش کی جاتی ہیں جن میں کشمیریوں پر بھارتی مظالم کے بارے میں حقائق سے آگاہ کیا جاتا ہے۔

پچھلے سالوں کی طرح اس بار بھی کشمیرای یو ۔ویک کی تقریبات میں آزادکشمیراورمقبوضہ کشمیرکے علاوہ شمالی امریکہ، برطانیہ اور یورپ کے دیگر ممالک سے بھی مندوبین شریک ہونگے۔ تقریبات کے افتتاحی پروگرام میں اراکین پارلیمنٹ، سیاسی اورسماجی شخصیات، دانشوروں اورمعاشرے دوسرے طبقات سے تعلق رکھنے والے اہم افراد کو مدعوکیاگیاہے۔

یورپی پارلیمنٹ میں ان تقریبات کی میزبانی اراکین یورپی پارلیمنٹ سجاد کریم اور واجد خان کریں گے۔

کشمیرکونسل ای یو کی طرف سے کشمیرای یو ۔ویک کی سالانہ تقریبات کا سلسلہ گذشتہ کئی سالوں سے جاری ہے۔اس کے علاوہ بھی کشمیرکونسل ای یو کے زیراہتمام دیگر مواقع پر بھی مسئلہ کشمیرپر تقریبات منعقد کی جاتی ہیں۔ کشمیرکونسل ای یو کی جانب سے وقتاًفوقتاً یورپ کے قانون ساز، تحقیقی اورعلمی اداروں میں اجلاسوں، کانفرنسوں ، مباحثوں اورسیمیناروں کا انعقاد کیا جاتا ہے۔

مختلف یورپی ممالک میں کونسل کی طرف سے کشمیرپر ایک ملین دستخطی مہم بھی جاری ہے۔ ان پروگراموں اورتقریبات کی وجہ سے یورپ کی سطح پر مسئلہ کشمیر کے حوالے سے قابل توجہ آگاہی پیداہوگئی ہے۔ان تقریبات کے انعقاد کے سلسلے میں کشمیرکونسل ای یو کے ساتھ یورپ کی انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی تعاون کر رہی ہیں۔

کشمیر کونسل ای یو کے چیئرمین علی رضاسید نے اپنے ایک بیان میں کہاہے کہ کہ ان تقریبات کا مقصد مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو اجاگرکرناہے اور مسئلہ کشمیر کے حوالے سے آگاہی پیداکرناہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ کشمیری عوام نے ابتک گرانقدر قربانیاں دی ہیں اور وہ ہرگز اپنے حق خودارادیت سے دستبردار نہیں ہوں گے۔