نیا اور کوئی
میرے سارے سوال باقی ہیں
ضرورت کیا ہے
آئے ہمیں نہ اشکوں کو نایاب دیکھنا
عشق
آنکھوں سے دریا بہا دوں گا
حسینؓ  ابن علی
چل کے آئے  ہیں گنہ گار مدینے والے
نام تیرا بھی ہے  کہانی میں
بہت تھک گیا ہوں خطا کرتے کرتے
سجدے میں پڑے کرتے رہیں شکر خدا کا
کوئی مشعل جلے روشنی کے لئے
آپ ہوتے ہیں جہاں عشق وہاں ہوتا ہے
حسن محمد ﷺ کا عیاں ہوتا ہے
اسے گلے سے لگائے زمانہ ہو گیا ہے
اے میرے پاکستان
نیک جو راہ ہو اس رہ پہ چلانا مجھ کو
کچھ رتجگے تھے جن کی ضرورت نہیں رہی
یہ قوم اب تمہاری وراثت نہیں رہی
الیکشن 2018
اس کے ہاتھوں سے جو خوشبوئے حنا آتی ہے
جو بھولنا تھا مجھ کو وہی یاد رہ گیا
چھپ کے تنہائی میں کچھ اشک بہالے تو بھی
یہ دل کا معاملہ ہے کوئی دل لگی نہیں
Page 1 of 35123Next ›Last »