برسلز: کشمیر کونسل یورپ کا شہید افضل گرو اور شہید مقبول بٹ کے اجساد خاکی ان کے لواحقین کے حوالے کرنے کا مطالبہ

Ali Raza Syed

Ali Raza Syed

برسلز (پ۔ر) کشمیر کونسل یورپ (ای یو) نے عظیم کشمیری شہداء افضل گرو اور مقبول بٹ کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے بھارتی حکومت سے کہاہے کہ وہ ان دونوں شہداء کے اجسادخاکی کو ان کے لواحقین کے حوالے کرے۔

دونوں شہداء کے برسی کے ایام کی مناسبت سے چیئرمین کونسل ای یو علی رضاسید نے اپنے بیان میں کہاکہ ان عظیم کشمیری سپوتوں نے شمع کی مانند تحریک آزادی کشمیرکو روشنی فراہم کی ہے۔انھوں نے بھارتی حکومت پر زوردیاکہ شہید مقبول بٹ اور افضل گرو کی میتوں کوکشمیرمیں انکے ورثاء کے حوالے کیاجائے تاکہ وہ اپنے رسم و رواج کے مطابق شہدا کی آخری رسومات ادا کرسکیں اوردرست طریقے سے تدفین ہوسکے۔

واضح رہے کہ ۹ فروری کو کشمیری حریت پسند محمد افضل گرو کی برسی کادن ہے۔ افضل گرو کو بھارت کی تہاڑ جیل میں۹ فروری 2013 ؁ء کو پھانسی دے کرورثاء کی اجازت کے بغیر وہاں ہی دفن کردیاگیا تھا۔ اس سے قبل محمد مقبول بٹ کو گیارہ فروری 1984ء کو اسی جیل میں پھانسی دے کر ان کے جسد خاکی کوان کے وارثین کی مرضی کے خلاف وہاں ہی جیل میں دفن کردیاگیاتھا۔

چیئرمین کشمیرکونسل ای یو علی رضا سید نے عالمی برداری خصوصاً یورپی یونین سے مطالبہ کیاکہ وہ بھارتی رویے کا سختی سے نوٹس لے کرنئی دہلی پر دباؤ ڈالے تاکہ افضل گرو اور مقبول بٹ شہید کی میتوں کو ورثاء کے حوالے کیاجائے ۔انھوں نے کہاکہ کتناظلم اورغیرانسانی فعل ہے کہ مقبول بٹ اور افضل گرو کوپھانسی دینے کے بعد انکے اجسادخاکی کو بھی بھارت نے قید کررکھاہے۔ دنیاکا کوئی بھی مہذب معاشرہ اس طرح کارویہ اختیارنہیں کرسکتا۔ انھوں نے واضح کیاکہ پھانسیاں دے کر اور ظلم و جبر کے ذریعے بھارت اپنے مذموم مقاصد حاصل نہیں کرسکتا بلکہ اسے کشمیریوں کوانکا حق خودارادیت دیناہوگا۔

علی رضاسید نے مقبوضہ کشمیر میں قید سیاسی رہنماؤوں کی رہائی اور ماورائے عدالت قتل و غارت اور نہتے اور پرامن مظاہرین پر پیلٹ گن جیسے مہلک ہتھیار کے استعمال کی روک تھام کا بھی مطالبہ کیا۔ چیئرمین کشمیرکونسل ای یو نے کہاکہ بھارت ظلم و بربریت کرکے تحریک آزادی کشمیر کو نہیں دباسکتا۔ کشمیریوں کی تحریک ضرور کامیاب ہوگی اور انہیں ایک دن ضرور آزادی ملے گی۔